ٹرائیکا کی سازشیں

یہودی کا خواب ہے پوری دنیا کے مالیاتی نظام پر قبضہ ، گریٹر اسرائیل بنانا ، مسجد اقصیٰ کو شہید کر کے تھرڈ ٹیمپل کی تعمیر ۔ ۔ ۔ اس مشن کی تکمیل کیلئے یہ کسی بھی حد تک جا سکتے ہیں ۔ ۔ ۔
مصر ، ایتھوپیا پانی کے معاملے پر جنگ کے بالکل قریب ، دریائے نیل پر زیر تعمیر ڈیم کی وجہ سے مصر نے ایتھوپیا کو جنگ کی دھمکی دی ہے ۔ ۔ مصری طیاروں نے ڈیم تباہ کرنےوالی جنگی مشقیں شروع کردی ہیں ۔
اسرائیل نے خاموشی سے ایتھوپیا کو سپائیڈر ایئر ڈیفنس سسٹم فراہم کر دیا ہے ، مصر کو بنجر کرکے پانی کا رخ موڑنے کے پیچھے اسرائیل کا ہاتھ ہے ۔ ۔ ۔ ایتھوپیا کو ڈیم بنانے میں اسرائیل مدد فراہم کر رہا ہے ۔ ۔ ۔
ایسٹ افریقن ممالک کے ساتھ ملکر عرب ممالک پر پریشر ڈال رہا ہے ، مصر کو بلیک میل کر کے اسے ڈیل آف دی سنچری پلان پر قائل کرنا چاہ رہا ہے ۔
اسرائیل چاہتا ہے عرب ممالک میں سیکورٹی کی صورت حال مخدوش ہو جاۓ ، عربوں کو سیکورٹی کے لالے پڑ جائیں ، عربوں کو اندرونی تنازعات میں الجھا کر انکی پوزیشن اتنی کمزور کر دی جاۓ کہ انکی بس ہو جاۓ ، پھر اسرائیل خود کو فرنٹ پر لاکر سیکورٹی کا جھانسہ دیکر عربوں کو اپنے ساتھ کھڑا کرے ، بدلے میں مقبوضہ علاقوں پر اسرائیلی قبضہ عرب تسلیم کر لیں ۔ ۔ ۔
سینٹرل ایشیا کے معدنی ذخائر پر ٹرائیکا کی برے طریقے سے نظر ہے ، اگر امریکہ ، افغانستان کا میدان خالی کر گیا تو افغان طالبان روس سے آزاد ہونیوالی ریاستوں تک رسائی حاصل کر کے خطے میں پوزیشن بہت مضبوط کر لیں گے ، طالبانی حکومت کے قیام کے بعد افغان سر زمین پر موجود معدنی ذخائر بین الاقوامی طاقتوں کے ہاتھوں سے نکل جائیں گے ۔
امریکہ ، اسرائیل کی اس خطے میں واحد امید بھارت تھا ، افغان طالبان ، چین کے ہاتھوں جو بھارت کا جلوس نکلا ہے ، افغان طالبان ، بھارتی ، امریکی شرائط پر کوئی بات ماننے کو تیار نہیں ۔ ٹرائیکا پریشان ہوگیا ہے ۔
بھارتی ناکامی کے بعد ، اسرائیل کا امریکہ پر دباؤ بڑھ گیا ہے ، سارے فوجی افغانستان سے نا نکالو ۔ ۔ ۔ جبکہ افغان طالبان نے ایک بیان میں کہا ہے کہ طالبان ، امریکہ کے درمیان ہونیوالے معاہدے پر وقتی عملدرآمد کروا لیں ، فوجی انخلاء میں دیر کا مطلب ، دہشت گرد قوتیں فائدہ اٹھا کر ، دوبارہ امریکی افواج پر حملے شروع کر سکتی ہیں ۔ ۔ ۔
ترکی کے ایئر ڈیفنس سسٹم پر حملے کے پیچھے بھی ایک عرب مسلم ملک کو ٹرائیکا نے استعمال کیا ہے ، ترکی کی جانب سے بدلہ لینے کا اعلان ہو چکا ہے ۔ ۔ ۔ بہر حال ترکی کیخلاف سازشوں میں اب بہت تیزی آنےوالی ہے ۔ زیر زمین خفیہ گیمز شروع ہیں ۔ ۔ ۔
اسرائیل ، لداخ ، کشمیر ہر طرف سے پاکستان چین سے لڑنے کیلئے ، اسرائیلی ڈرونز ، میزائل سسٹم تعینات کر چکا ہے ، جنکو ڈائریکٹ اسرائیل سے کنٹرول / مانیٹر کیا جا رہا ہے ۔ ۔ ۔
جبکہ جموں کشمیر جسکو بھارت کہتا ہے میرا ہے ، آرٹیکل 370 کے بعد اپنی طرف سے ہضم کر چکا ہے ، اقوام متحدہ سیکریٹیریٹ اسکو الگ ملک مانتا ہے ، سیرین گولان کا علاقہ جسے اسرائیل 1964 میں قبضہ چکا ، اقوام متحدہ سیکریٹیریٹ کے مطابق الگ ملک ہے ، 3 سال پہلے نقشہ اپ ڈیٹ کیا جا چکا ہے ، مطلب کچھ بہتر ہونے والا ہے ، کشمیر کی آزادی بہت قریب آ لگی ہے ۔ انشااللہ تعالیٰ

چین ، ایران کے درمیان 400 ارب ڈالر کا معاہدہ ، ڈرافٹ میں تبدیل ہوکر ایرانی پارلیمنٹ میں جا رہا ہے ، چاہ بہار بھارت کے ہاتھوں سے گیا ، امریکہ ، چین ، ایران ، پاکستان تمام نئے بلاک کے ممالک پر اقتصادی پابندیاں عائد کرے گا ، یہاں سے ڈالر کی موت ہوگی اب ۔ ۔ ۔ بھارت خطے کی گیم سے باہر ۔
چاہ بہار ، سی پیک کا حصہ ۔ ۔ ۔ افغانستان ، ایران ایک ہو چکے ہیں ، یہ بات ذہن نشین کر لیں ۔ ۔ ۔ گوادر ، چاہ بہار پورٹ سے بھارت کا ناطقہ بند ۔ ۔ ۔
انڈیا ، امریکہ ، اسرائیل کا پلان تھا ، کشمیر پر قبضہ کر کے خطے کی صورت حال پر نظر رکھنے کیلئے ، کشمیر میں انکی موجودگی ۔ ۔ ۔ مگر ۔ ۔ ۔ اللّه کی تدبیر سب پر حاوی ہے ۔
عرب ممالک کو اب فیصلہ کرنا ہے ، چین ، پاکستان یا امریکہ ، اسرائیل ۔ ۔ ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں